اگر کبھی میری یاد آۓ

یہ نظم عنبر کے لئے ہے کیونکہ وہ مجھ سے یہ نظم سننا پسند کرتی ہے۔ اسے آپ ابرار الحق کی آواز میں سن سکتے ہیں۔

This poem is for Amber who is always asking me to recite it for her. It’s by the Pakistani poet Amjad Islam Amjad. It has also been sung by Abrar ul Haq. (Warning: I can’t figure out if the songs on muziq.net are legal or not.)

Sorry I can’t translate poetry into English.

یہ نظم عنبر کے لئے ہے کیونکہ وہ مجھ سے یہ نظم سننا پسند کرتی ہے۔ اسے آپ ابرار الحق کی آواز میں سن سکتے ہیں۔ مجھے معلوم نہیں کہ muziq.net پر گانے قانون کے مطابق ہیں یا نہیں۔

اگر کبھی میری یاد آۓ
تو چاند راتوں کی دلگیر روشنی میں
کسی ستارے کو دیکھ لینا
اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر تمہارے قدموں میں آ گرے تو یہ جان لینا
وہ استعارہ تھا میرے دل کا
اگر نہ آۓ؟ ۔۔۔
مگر یہ ممکن ہی کس طرح ہے کہ کسی پر نگاہ ڈالو
تو اس کی دیوار جاں نہ ٹوٹے
وہ اپنی ہستی نہ بھول جاۓ!!
اگر کبھی میری یاد آۓ
گریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا
میں خشبووں میں تمہیں ملوں گا
مجھے گلابوں کی پتیوں میں تلاش کرنا
میں اوس قطرہ کے آئینے میں تمہیں ملوں گا
اگر ستاروں میں، اوس خشبووں میں
نہ پاؤ مجھ کو
تو اپنے قدموں میں دیکھ لینا
میں گرد ہوتی مسافتوں میں تمہیں ملوں گا
کہیں پہ روشن چراغ دیکھو تو جان لینا
کہ ہر پتنگے کے ساتھ میں بھی سلگ چکا ہوں
تم اپنے ہاتھوں سے ان پتنگوں کی خاک دریا میں ڈال دینا
میں خاک بن کر سمندر میں سفر کروں گا
کسی نہ دیکھے ہوۓ جزیرے پہ رک کے تمہیں صدائیں دوں گا
سمندروں کے سفر پہ نکلو
تو اس جزیرے پہ کبھی اترنا!!

Author: Zack

Dad, gadget guy, bookworm, political animal, global nomad, cyclist, hiker, tennis player, photographer

19 thoughts on “اگر کبھی میری یاد آۓ”

  1. Should have know that when the language switch was coming we would in for a dose of Urdu imperialism 🙂
    Well at least the love poetry is some small compensation:p

  2. Aren’t you guys supposed to comment in Urdu on an Urdu post?

    Conrad: Urdu imperialism

    C’mon, there’s no way I can translate poetry. All other Urdu posts will have English translations. But someone should check my translation to make sure I am not saying one thing in English and another in Urdu, much like Arafat. 😉

    Keats: Thanks.

  3. and on its being sung by Abrar ul Haq.. the guys extremely nasal voice gets on my nerves. I think he should focus on and sing typical sarak chhap punjabi songs that got him fame in teh first place. such soulful words need a soulful voice. the tune he sung to was haunting and befitting to the poem though.

  4. AWK: Preferably using the Urdu script. I am going to put up a post soon about how to do that. It depends on your operating system.

    About Abrar, I think he’s great with those Punjabi songs. This one is definitely not that good.

  5. اگر کبھی ميری ياد آۓ
    تو چاند راتوں کی دلگير روشنی ميں
    کسی ستارے کو ديکھ لينا
    اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر تمہارے قدموں ميں آ گرے تو يہ جان لينا
    وہ استعارہ تھا ميرے دل کا
    اگر نہ آۓ؟ ۔۔۔
    مگر يہ ممکن ہی کس طرح ہے کہ کسی پر نگاہ ڈالو
    تو اس کی ديوار جاں نہ ٹوٹے
    وہ اپنی ہستی نہ بھول جاۓ!!
    اگر کبھی ميری ياد آۓ
    گريز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا
    ميں خشبووں ميں تمہيں ملوں گا
    مجھے گلابوں کی پتيوں ميں تلاش کرنا
    ميں اوس قطرہ کے آئينے ميں تمہيں ملوں گا
    اگر ستاروں ميں، اوس خشبووں ميں
    نہ پاؤ مجھ کو
    تو اپنے قدموں ميں ديکھ لينا
    ميں گرد ہوتی مسافتوں ميں تمہيں ملوں گا
    کہيں پہ روشن چراغ ديکھو تو جان لينا
    کہ ہر پتنگے کے ساتھ ميں بھی سلگ چکا ہوں
    تم اپنے ہاتھوں سے ان پتنگوں کی خاک دريا ميں ڈال دينا
    ميں خاک بن کر سمندر ميں سفر کروں گا
    کسی نہ ديکھے ہوۓ جزيرے پہ رک کے تمہيں صدائيں دوں گا
    سمندروں کے سفر پہ نکلو
    تو اس جزيرے پہ کبھی اترنا!!

    بہت ہی زبردست غزل ہے
    مجہے بہی بہت پسند آئ ہے یہ غزل۔

  6. ماشاءاللہ، اچہا کام کیا ہے آپ نے اردو میں، اور غزل تو ہے ہی اتنی زبردست کہ کیا کہنا، اس کام کو آپ اور آگے بڑہاؤ، امید ہے کہ آپ مزید اچہا کام کر سکتے ہو ۔

  7. اسد صاحب
    کيہ ھی اچھہ ہوتا اگر آپ اور ۔۔۔ بڑہاؤ کی جگہ بڑہائيے استعمال کرتے

    با ادب بے ہدبی ميں مزا نہيں ہے

  8. I want to say to every body that write your comments in clear english the poem was nice but i think that Mr has lost his mehbooba but that’s just a guess may be i am wrong any ways bye

  9. چاند نکلا تھا مگر رات نہ تھی پہلی سی
    یہ ملاقات، ملاقات نہ تھی پہلی سی
    رنج کچھ کم تو ہوا آج تیرے ملنے سے
    یہ الگ بات ہے کے وہ بات نہ تھی پہلی سی

  10. Mein us jazeerey par bhi gayaa tha………
    Guman tha keh tu wahan mile gaa………
    Keh aus qatroon key ainey mein tujhey talasha..
    Khizan darakhtoon ki tehnion par…barf paharoon ki chotion par
    Zameen zaron ki rah-guzaron mein..
    Tujh ko mein ney buhat talasha
    Mein apni hasti ka tanha lamha
    Mein apni aakhon ka tanha aanso
    Mein apney wujdan ka tanha hisa
    Is jazeerey par chor aaya…guman tha keh tu wahan miley gaa
    Chand ratoon ki chandni
    Udaas paton ki sarsarahat
    Banjh shakhoon ki sayein sayein
    Tera tanha udaas saya
    Terey kanoon mein jab kahey to samajhna keh
    Yeh hawayein usi jazeerey sey aa rahi hein
    Guman tha keh tu wahan miley gaa
    Magar yeh sansein keh na-munazim – magar yeh aankhein keh dhundli dhundli
    Kasni phool patoon ki tujh ko kasam
    Is jazeerey par ik baar ruk jana
    Keh
    Mein ney tujh ko buhat talasha
    Samundaron sey samundaron tak
    Kasni shuaoon key paar utar kar
    Guman tha keh tu wahan miley gaa….

Comments are closed.