300

It is about the Battle of Thermopylae, a famous last stand. However, being based on a graphic novel, it is bad. Very bad. I rate it 2/10.

So one fine evening I got a call from Captain Arrrgh that we should go see the movie 300 which is about the Battle of Thermopylae (translated as Hot Gates in the movie) between the Spartans and Xerxes’s army.

The movie was very bad. There were strange cliches in the dialog like “freedom is not free,” “mysticism and tyranny” (about the Persians), “law and order,” etc. At times, the movie seemed like a very bad imitation of Lord of the Rings with giants, orc-like Persian soldiers and the Nazgûl-like immortals. Then there is no gravity for the Spartans. There isn’t even any military strategy on the part of the Greek army as they go out of the narrow passage between the mountains quite frequently. Xerxes is an effeminate giant man. Overall, it might have worked as a parody of Lord of the Rings and Matrix.

Then I came home and found out that the movie was based on Frank Miller’s graphic novel. That explains some of the movie’s badness but not all.

I rate it 2/10.

How Pakistani Are You?

Finally a quiz to measure how much of a Pakistani one is. Fortunately or unfortunately, I didn’t do too well.

Via Koonj, here is a quiz measuring my Pakistaniness.

Arey, you are 29% Pakistani!

 

Sorry yaar, that’s quite low. You’re either a Pakistani that’s strayed far from your roots, or a non-Pakistani with a little bit of spice in your character. A little bit more effort wouldn’t hurt!

How Pakistani are you? (first class number one!)
Create a Quiz

May be Bloggers Pakistan can use these results instead of asking “What is a ‘LOTTA’”.

Barack Obama

Senator Barack Obama was in town for a rally. Here is my report on his speech. Overall, Obama is a good speaker, though I am not ready to support him yet.

I got an email Thursday that Barack Obama would be coming for a public rally at Georgia Tech on Saturday. So, of course, I decided to go.

The gate-opening time was 10am and the rally was supposed to start at 11. I got to the Yellow Jacket Park around 11 and there were a lot of people there with more coming. According to the Atlanta Journal-Constitution, 20,000 people attended.

Reverend Joseph Lowery started the proceedings at 11:40 with a prayer. Then, Alexandra Jackson, daughter of former Atlanta mayor Maynard Jackson, sang the national anthem.

While waiting for Obama to come, I surveyed the crowd. There were US flags, Obama’08 signs and saw a couple of antiwar signs (“War no more, Peace is good”).

Obama Rally
Obama Rally
 

Senator Obama came at 11:56am. He started off by expressing surprise at the large crowd. He said that we are at a crossroads where change is a necessity, but a lot of people are cynical and don’t think they can affect the government or politics. Then Obama got into his history, especially his time as a community organizer and how he learned that ordinary people can do extraordinary things.

Obama also went through a list of problems, like veterans issues, healthcare, economic inequality, education, global warming, civil liberties, unions and the Iraq war and said all of these can be solved if we pull together as a people and work on these issues. However, he said that nothing can be done until we end the Iraq war by getting our troops home. He talked about a careful exit from Iraq and a diplomatic surge and there being no military solution and blamed the administration for its stubbornness.

Senator Obama took a jab at those saying that he doesn’t have much experience by saying that people around the country don’t see his not being in Washington DC for a long time as a problem. As is common with all politicians, he also positioned himself as an outsider by saying that he had been in Washington long enough to realize it needs to change.

Near the end of his speech, he asked for help from the people as he couldn’t lead the country alone. He said that there might be times when he is weary, makes mistakes or doesn’t have the answers, but a million people can do a lot together and it is time to retake the government back for the people.

Obama mentioned several incidents from the civil rights movement. One thing that he said about them (and I agree wholeheartedly) is that this is not African American history, but rather American history. He also mentioned slavery, suffragettes, and the union movement.

One phrase that got used a lot of times during Obama’s speech was “time to turn the page.”

I had to leave as I had a gaming session planned with friends, but as I was leaving, Obama’s speech ended. He talked for about 35-40 minutes.

Overall, his speech was good. He has the oratorical skills that are probably necessary for all candidates. He did not say anything unexpected. While he mentioned a litany of issues, he did not try to fill his speech with policy solutions. In the end, I am a policy wonk kind of guy but those details don’t work in the speech format, especially at public rallies.

As for my support, I don’t intend to decide until it is close to the start of the primaries. I liked what I saw of Obama, but I do need to find out more about his policies and ideas.

Do let me know if any other Presidential candidates visit Atlanta.

Rashomon

Rashomon is an interesting, though not great, Japanese movie about the nature of truth and different viewpoints. I rate it 6/10.

Rashomon is a Japanese movie about a crime of rape and murder. It shows the differing accounts of the crime. Which is the truth? It never tells us that, or at least not directly.

Having watched a few old Japanese movies, a few things seem very similar, like the rain and the village setting. These old Japanese movies look like low-budget movies and hence some of the production values (as well as the restoration work) are not that good. However, the movie plot is generally decent.

While Rashomon was interesting, it wasn’t great. I would rate it 6/10.

Happy Easter and Hag Sameach

A Happy Easter to all my readers. And a Happy Passover too.

Today is Good Friday. So a Happy Easter to all my readers.

And sorry I am late. Passover started at sunset on April 2, but it is a week long holiday. So a Happy Passover too.

یہ کیسا جہاد ہے

پاکستان میں کیا ہو رہا ہے؟ جہاد کے نام پر مسلمان کن کاموں میں پڑ چکے ہیں؟ کیا اسلام صرف سیاست اور تشدد ہی کا نام ہے؟

پاکستان کس طرف جا رہا ہے؟ اب تو وہاں کی خبریں ایسی ہی لگتی ہیں جیسے کسی اجنبی ملک کی۔ وقت کے ساتھ ساتھ روز پاکستانی اخبار پڑھنے کی عادت بھی ختم ہوتی جا رہی ہے۔ مگر پھر بھی کچھ سن گن رہتی ہے اور کچھ جذبات بھی اس جگہ سے جہاں عمر کے بیس اکیس سال گزرے اور جہاں آج بھی بہت سے جاننے والے رہتے ہیں۔ اس کا نتیجہ یہ ہے کہ کچھ معلومات اور اندازے لگا سکتا ہوں پاکستان میں ہونے والے واقعات کے متعلق۔

پاکستان میں خودکش دھماکوں کا سلسلہ تو کچھ سالوں سے جاری تھا مگر اس سال اوپر تلے اسلام‌آباد، کھاریاں، کوئٹہ وغیرہ میں بم دھماکے ہوئے۔ کیا اب خودکش بمبار ساری دنیا میں پھیل جائیں گے؟ کیا یہی نتیجہ ہے فلسطین، افغانستان، کشمیر وغیرہ کے جہاد کا؟ یا یہ تامل ٹائیگرز کی پیروی ہے؟

فروری میں پنجاب کی صوبائی وزیر ظل ہما کو گجرانوالہ مسلم لیگ ہاؤس میں مجمع میں سے ایک شخص نے گول مار کر قتل کر دیا۔

پنجاب کی صوبائی وزیر ظل ہما کو قاتلانہ حملے میں ہلاک کرنے کے ملزم غلام سرور نے عدالت میں اعتراف جرم کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس نے یہ قتل کرکے جہاد کیا ہے اور اسے اس بات پر فخر ہے۔

پولیس کے مطابق ملزم پانچ سال پہلے بھی لاہور اور گوجرانوالہ چھ ایسی خواتین کو قتل کرنے کے الزام میں گرفتار ہوا تھا جنیں مبینہ طور پر کال گرل بتایا گیاتھا۔

پولیس کے مطابق غلام سرور بارہ جنوری دو ہزار تین کو گرفتار ہوا تھا لیکن مدعیوں کے اسے بے گناہ قرار دیئے جانے کے بعد دسمبر دو ہزار پانچ کو رہا ہو گیا تھا۔

وہ ایک بار حج اور دو بار عمرہ کرچکا ہے۔ اس کے نو بچے ہیں۔

اپریل سنہ دو ہزار پانچ میں گوجرانوالہ میں حکومت نے پہلی بار میراتھن منعقد کرائی تو ظل ہما نے اس کے انتظامات میں سرگرمی سے حصہ لیا تھا جبکہ مذہبی جماعتوں نے اس دوڑ کی سخت مخالفت کی تھی۔

اب ظل ہما کو قتل کرنے کی وجہ میراتھن تھی یا عورتوں سے غلام سرور کا عناد مگر یہ بات قابل غور ہے کہ ملزم کے نزدیک وہ جہاد کر رہا تھا۔ جہاد کی ایسی مثالیں مسلمانوں میں عام ہوتی جا رہی ہیں۔ دکھ کی بات یہ ہے کہ اچھے خاصے پڑھے لکھے اور مذہبی لوگ بھی جہاد کے بارے میں کچھ نہیں جانتے اور ہر فسادی کو محرب کی بجائے مجاہد سمجھتے ہیں۔

اب ہم آتے ہیں جامعہ حفصہ کی طالبات کی طرف جنہوں نے حکومت کی طرف سے غیرقانونی مساجد کے گرانے کے خلاف احتجاج کے طور پر ایک لائبریری پر قبضہ کر رکھا ہے۔ میں اسلام‌آباد کی مساجد کی قانونی حیثیت کے بارے میں کچھ نہیں کہہ سکتا اور نہ ہی میں حکومت کا حامی ہوں۔ پاکستان کی حکومت کام سوچ سمجھ کر اور صحیح طریقے سے نہیں کرتی اس لئے میں اس بات پر تبصرہ نہیں کروں گا۔ البتہ کچھ دن پہلے ان طالبات نے جی سکس میں ایک گھر پر چھاپہ مار کر وہاں کی عورتوں کو یرغمال بنا لیا۔

مدرسہ حفصہ کی انتظامیہ نے دھمکی دی ہے کہ اسلام آباد کے ایک مکان پر طالبات کے چھاپے اور تین خواتین کو یرغمال بنانے کے الزام میں گرفتار کی گئی چار استانیوں کو بدھ کی شام تک رہا نہ کیا گیا تو جہاد کا اعلان کر دیا جائے گا۔

مدرسے کی طالبات نے اسلام آباد کے ایک رہائشی علاقے جی سکس کے ایک مکان پر منگل کی شام کو چھاپہ مار کر ایک خاتون اور اس کی بہو اور بیٹی کو ’جنسی کاروبار میں ملوث ہونے پر‘ یرغمال بنا لیا تھا۔ مقامی پولیس نے طالبات کی طرف سے کی جانے والی اس کارروائی کے جواب میں مدرسے کی چار خواتین اساتذہ کو گرفتار کر لیا تھا۔

پولیس کی کارروائی کے بعد مدرسے کی سینکٹروں طالبات ڈنڈے اٹھا کر سڑک پر نکل آئیں۔ مشتعل طالبات نے جنھیں طلباء کی معاونت بھی حاصل تھی پولیس کی دو گاڑیوں کو ان کے ڈرائیوروں سمیت مدرسے کے احاطے میں بند کر دیا۔

مدرسے کے منتظم غازی عبدالرشید نے بعد ازاں ایک پریس کانفرنس کو بتایا کہ اسلام آباد کی رہائشی تین خواتین ان کے قبضے میں ہیں۔ انہوں نے مقامی انتظامیہ کو خبردار کیا کہ اگر فوری طور مدرسے کی چار اساتذہ کو رہا نہ کیا گیا تو جہاد کا اعلان کر دیا جائے گا۔

غازی عبدالرشید نے حکام سے مطالبہ کیا ہے کہ ان خواتین پر زنا کے الزام میں مقدمات چلائے جائیں اور قرار واقعی سزائیں دی جائیں۔ انہوں نے خبردار کیا کہ اگر حکام نے ان پر مقدمات دائر نہ کیئے تو مدرسے کے اندر قاضی عدالت قائم کی جائے گی اور شریعت کے مطابق انہیں سزائیں سنائی جائیں گی۔

اس مدرسے کی طالبات اور طلباء نے آبپارہ مارکیٹ میں واقع ویڈیو شاپس کے مالکان کو بھی خبردار کیا ہے کہ جنسی مواد پر مبنی سی ڈیز کی فروخت بند کردیں۔

جب غازی عبدالرشید سے پوچھا کہ ان کے مدرسے کی طالبات نے کس اختیار کے تحت کارروائی کی تو انہوں نے کہا کہ یہ اسلامی ملک ہے اور اسلام کہتا ہے کہ برائی کو روکیں۔

بعد میں پولیس نے مدرسے کی استانیوں کو رہا کر دیا اور طالبات نے بھی جن پولیس اہلکاروں کو پکڑ لیا تھا انہیں چھوڑ دیا گیا۔ کچھ دن بعد لال مسجد میں ایک پریس کانفرنس میں یرغمالی شمیم اختر کے اقبالِ جرم کے بعد ان خواتین کو چھوڑ دیا گیا۔ گھر پہنچنے کے بعد شمیم اختر نے کہا کہ وہ بیان تو اس سے زبردستی دلوایا گیا تھا۔

یہ اسلام‌آباد ہے پاکستان سے دس کلومیٹر باہر ۔ یہاں قانون کا کوئی پاس نہیں۔ حکومت شہریوں کی حفاظت کی بجائے نجانے کس کام میں مصروف ہے اور مذہبی جنونی جس کو چاہتے ہیں یرغمال بناتے ہیں جسے برا سمجھتے ہیں اسے دھمکیاں دیتے ہیں۔ بے‌گناہی کا انہیں کوئی پاس نہیں کہ innocent until proven guilty والا مقولہ انہوں نے کبھی نہیں سنا۔

یہ خبر پڑھتے ہوئے مجھے جامعہ حفصہ کے پرنسپل عبدالعزیز کا نام کچھ جانا پہچانا لگا۔ عبدالعزیز آجکل لال مسجد کے امام ہیں۔ جب میں پاکستان میں تھا تو ان کے والد عبداللہ وہاں کے امام تھے اور عبدالعزیز ایف 8 کی مسجد میں ہوتے تھے۔ یہ صاحب پڑھے لکھے اور مزاج میں سلجھے ہوئے انسان ہیں۔ مگر صد افسوس کہ ایسے ہی مسلمان ہمیں دہشت‌گردی میں ملوث نظر آتے ہیں۔ عبدالعزیز صاحب نوے کی دہائی میں افغانستان میں طالبان کے قصیدے پڑھا کرتے تھے اور ان کی مسجد میں اکثر حرکت الانصار (کشمیر میں حربی گروہ) کے ارکان اور کرتا دھرتا چندے مانگنے آیا کرتے تھے۔ آجکل بھی سنا ہے عبدالعزیز کی مسعود اظہر اور جیش محمد والوں سے گاڑھی چھنتی ہے۔ ایک بات کا خیال رہے کہ ایف 8 کی مسجد بھی شاید سرکاری تھی اور لال مسجد بھی۔ تو کیا عبدالعزیز ایک سرکاری ملازم ہیں؟ اور اگر ہیں تو کیسے جہاد کی کال دے رہے ہیں؟

آجکل جہاد کا نام آتا ہے تو ہمارے ذہن میں کچھ عجیب سا خاکہ بنتا ہے جس میں قتل و غارت کو بڑی اہمیت حاصل ہوتی ہے۔ باقی دنیا کو چھوڑیں مسلمانوں کا یہی حال ہے بلکہ بہت سے مسلمان سیاست اور تشدد سے جہاد کا سرا باندھتے ہیں اور ایسے جہاد کو نہ ماننے والوں کو مسلمان ہی نہیں سمجھتے۔ حالانکہ اگر آپ شروع اسلام سے مسلمانوں کی تحاریر پڑھیں تو جہاد کے متعلق آپ کو کافی مختلف خیالات ملیں گے۔ آج کے مسلمان تو کچھ باتوں میں بالکل خوارج لگتے ہیں۔