Italy Day 4: Rome and Venice

Travelogue of our trip to Italy. This covers our fourth day in Rome when we took a tour bus around the city and our train trip and first night in Venice.

Don’t worry, English readers, just scroll down past the Urdu since it’s a bilingual article.

چوتھے دن صبح اٹھے تو عنبر کا کہنا تھا کہ ایک ٹوئر بس پر روم کا چکر لگاتے ہیں تاکہ مجھے چلنا نہ پڑے اور میرا ٹخنہ کچھ بہتر ہو جائے۔ دوسری وجہ یہ بھی تھی کہ دوپہر کو ہمیں ٹرین پر وینس جانا تھا۔ لہذا ہم نے ہوٹل سے ناشتے کے بعد چیک آوٹ کیا اور اپنا سامان انہی کے پاس چھوڑا۔ پاس ہی چرچ کے ساتھ ٹوئر بسیں آتی تھیں وہاں سے ایک ٹوئر بس کی اوپری بغیر چھت کی منزل پر بیٹھے اور روم کا چکر لگایا۔ ان میں سے بہت سی جگہیں ہم دیکھ چکے تھے مگر بس سے چھت سے منظر کچھ مختلف ہوتا ہے اور کچھ نئے علاقے بھی دیکھنے کو ملے جہاں جانے کا ہمیں وقت نہیں ملا تھا۔

اڑھائ تین گھنٹے کے بعد بس نے ہمیں واپس اتار دیا۔ ہم نے پہلے لنچ کرنا مناسب سمجھا اور پھر ہوٹل سے اپنا سامان لیا۔ سامان کے ساتھ ہم روم کے ٹرمینی سٹیشن پیدل روانہ ہوئے۔ وینس کے لے تیزرفتار ٹرین کے ٹکٹ ہم پہلے ہی خرید چکے تھے۔ اب ٹرین کا انتظار تھا۔ وہ کوئ آدھ گھنٹہ لیٹ تھی۔ لگتا ہے اطالوی ٹرین سسٹم کو واقعی وقت پر کام کرنے کے لئے مسولینی کی ضرورت تھی۔ خیر ٹرین آئ اور ہم اپنی سیٹیں تلاش کر کے اس میں بیٹھ گئے۔ ٹرین روم سے نکلی تو ارد گرد کا خوبصورت منظر، کھیت، پہاڑیاں وغیرہ دیکھ کر دل خوش ہوا اور سوچا کہ اگلی بار روم سے باہر بھی نکلنا ہے۔ کچھ دیر بعد ہم ڈائننگ کار میں گئ جہاں سے میں نے کافی اور میشل نے چاکلیٹ بسکٹ لئے۔

کوئ ساڑھے چار گھنٹے میں ہم وینس پہنچ گئے۔ وہاں ٹرین سٹیشن سے نکلے تو سامنے بڑی نہر تھی۔ ہوٹل پہنچنے کے لئے ہمیں کشتی یعنی فیری میں جانا تھا جسے وہاں ویپوریتو کہتے ہیں۔ فیری لوگوں کو لے کر نہر پر روانہ ہوئ۔ کچھ سٹاپ گزرنے کے بعد مجھے شک ہوا کہ ہمارا سٹاپ کدھر گیا۔ کنڈکٹر سے پوچھا تو معلوم ہوا کہ وہ سٹاپ تو بند ہے اور پیچھے رہ گیا۔ اب ہمیں اگلے سٹاپ پر اتر کر واپس جانا ہو گا اور ایک اور سٹاپ پر اترنا ہو گا۔ یہ خیال رکھنا ضروری ہے کہ ہم نہر کے صحیح طرف اتریں کہ نہر پار کرنے کے لئے ایک دو ہی پل ہیں۔ اس کے علاوہ نہر پار کرنے کے لئے کچھ خاص تراگیٹو سٹاپ پر گنڈولا کشتی بھی استعمال کی جاتی ہے۔

نئے سٹاپ پر اترے تو جی‌پی‌ایس نکالا تاکہ ہوٹل تک پہنچا جا سکے۔ ہوٹل کی گلی کے نزدیک ریستوران کے پاس ایک آدمی ہماری طرف دوڑا آیا۔ معلوم ہوا کہ وہ ہوٹل کا مینجر ہے اور ہماری انتظار میں تھا کہ وہ شام کو ہوٹل بند کر کے گھر چلا جاتا ہے۔ ہوٹل کے شاید 9 کمرے تھے۔ اس نے ہمیں کمرے کی چابی کے ساتھ باہر کی چابی بھی دی کہ گیٹ اکثر رات کو لاک ہوتا ہے۔

ہوٹل کے بالکل قریب ہی ایک ریستوران میں ہم نے کھانا کھایا۔ میں نے پیزا آرڈر کیا جبکہ معلوم نہیں کیوں عنبر کا دل باسمتی چاول اور چکن کڑی پر آ گیا۔

Since my ankle was swollen, Amber suggested that we not walk that day and instead take a tour bus around Rome. Also, we only had half a day in Rome since we were leaving for Venice early afternoon.

We checked out of our hotel after breakfast and asked them to keep our bags while we got on a tour bus near the Basilica of Saint Mary Major. It was a two-story bus with an uncovered upper level, which was great for sightseeing. We had seen a lot of the places the bus took us around but the vantage point of the upper level was good for photography and it did take us to areas we hadn’t found the time to visit. The photographs are at the end of this article on a map.

The tour took almost three hours and then we were back in the neighborhood of our hotel. We decided to have some lunch first and then got our bags from the hotel. It was almost time to walk to the Termini station for the train to Venice. We had already bought the tickets a couple of days ago at Termini after being unsuccessful in buying them online before the trip (The Tren Italia website declined our credit card every time). Our train was about half an hour late. We finally got on and found our seats.

As the train left Rome and passed through the rolling hills of the countryside, we felt we had to visit Italy again and drive in the area.

It took us some four and a half hours to reach Venice. Coming out of the train station, there was the Grand Canal. We then took a vaporetto or waterbus on the Grand Canal to go to our hotel. After a while on the vaporetto, I was confused about why it was taking so long. I asked the conductor about the San Silvestre stop. He told me that San Silvestre was closed for a few days and was behind us now. So we had to get off the vaporetto at the next stop and go back. We got off at the San Toma’ stop since that was on the same side of the Grand Canal and walked to our hotel.

Train for Venice
Venice
On the vaporetto
Cruising the Grand Canal
Building
Around the Grand Canal
 

As we got to Campo San Polo, a man came towards us asking me my name. It turned out he was the hotel manager. He took us to Hotel Acca in a narrow alley. The hotel had 9 rooms. The outside gate and main door were generally locked in the evening, so the manager gave us keys for both.

After checking in and putting our bags in our room, we went for dinner at the restaurant Birraria La Corte which was just outside the hotel alley. It was crowded and it took us a while to get a table. I ordered a pizza while Amber went crazy by eating Basmati rice with chicken curry.

The photos of the Rome bus tour appear below (under the fold) on a map.

Continue reading “Italy Day 4: Rome and Venice”